کولگام میں دریاے ویشو پر باندھ کو تباہ کرنے کے حوالے سے کیس درج۔

کولگام کے اشموجی میر پورہ میں غیر قانونی کان کنی پر ہائی کورٹ کی پابندی کے باوجود بھی ییاں جنوبی کشمیر کے کولگام ضلع کے میر پورہ آشموجی علاقے کے رہائشیوں نے احتجاج کیا کہ علاقے میں غیر قانونی کان کنی کا کام بلا روک ٹوک جاری ہے۔علاقے میں حکام نے غیر قانونی کان کنی نکالنے پر پابندی بھی نافذ کر دی ہے لیکن دیر رات گئے ریت مافیا سرگرم ہو جاتا ہے۔علاقے میں دریاے ویشو پر لگایے گیے سرکاری باندھ کو دو دو ہاتھوں سے تھوڈ دیا جاتا ہے۔ مقامی لوگوں کا کہنا تھا کہ وہ متعدد بار متعلقہ محکموں کو آگاہ کر چکے ہیں لیکن اب تک علاقے میں اس لعنت کو روکنے کے لیے کچھ نہیں کیا گیا۔ انہوں نے لیفٹیننٹ گورنر کی قیادت والی انتظامیہ سے اس معاملے میں مداخلت کی اپیل کی ہے۔وہی جیولوجی ایند ماینگ آفسر ڈاکٹر خورشید نے میڈیا کے نمایدوں کو بتایا کہ علاقے میں کئ لوگوں غیر قانونی طور پر رات کے دوران کان کنی کررہے ہے اور کئ محکموں کی جانب سے باندھ کو تباہ کرنے کے حوالے سے پولیس اسٹیشن میں ایک کیس بھی درج کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ کئ مہنوں سے انہوں نے لگ بھگ 80 سے زیادہ گاڈیاں غیر قانونی کان کنی کرنے کی پیدایش میں بند کیے.اور 27 لاکھ جرمانہ بھی عاید کیا گیا۔وہی تحصدار کولگام بلال احمد نے نمایدے کو فون پر بتایا کہ وہ علاقے کے لیے ازخود موقہ پر جاکر معاینہ کریں گیے اور باضابطہ ایک کیس درج کیا گیا۔وہی فلڈ اینڈ کنٹرول محکمہ کی جانب سے بھی اس حوالے سے ایک کیس درج بھی کیا گیا۔وضعہ رہے ضلع میں ملٹی ڈپاٹمنٹل ضلع لیول ٹاسکفورس سیل کا قیام بھی عمل میں لایا گیا۔

2022-11-19 05:18:00 Suhail Ahmad Baba



Comment Area